Subscribe:

Wednesday, April 20, 2011

جہاد میں قبولیت کی شرائط

پیش خدمت ہے
استاد احمد فاروق حفظہ اللہ کا صوتی بیان
بعنوان

جہاد میں قبولیت کی شرائط
پیش کش ۔ السحاب میڈیا


مجھے اپنی دعاؤں میں ضرور یاد رکھیے
آپ کا مجاہد بھائی

Tuesday, April 12, 2011

سخی داتا دربار پر ہونے والا افسوس ناک واقعہ



السلام علیکم
عرفان بھائی یہ جو سخی داتا دربار پر جو اٹیک ہوئے ہیں ان کی شرعی حیثیت کیا ہے ؟ میرا مطلب ہے کوئی شخص مسلم ہے اور وہ مومن نہیں (یعنی شرک کرتا ہے ) تو اسلام کا ایسا کون سا پہلو ہے جو مجاہدین کو اجازت دیتا ہے کہ وہ ایسے عام مسلمانوں کو مار دیں جن کو شرک کا کنسپٹ تک پتا نہ ہو ؟ اور یہ مجاہدین کا ہی موقف ہے کہ ہمیں  ایک اسلامی شریعت کے قیام کے لیے جدوجہد کرنی چاہیے جب ایک مسلم معاشرہ قائم ہوجائے گا تو ایسی فضولیات (درباروں پہ مانگنا ) خود بخود ختم ہوجائے گا ۔بس اس بات کا تفصیلاً جواب بتائیں کیا اگر کوئی مسلم شرک کرتا ہے تو کیا مجاہد کو اسلام میں حق حاصل ہے کہ اسے قتل کردے ؟

وعلیکم السلام ورحمۃ اللہ وبرکاتہ
سخی داتا دربار پر ہونے والے افسوس ناک واقعے پر ہمارے دل غم سے بھرے ہوئے ہیں اور ہم سے زیادہ کون اس بات کا حقدار ہے جو اس پر افسوس کرے اور غم زدہ ہو۔۔۔۔۔
اس واقعے کے کئی دن بعد تک اس موضوع پر بلاگ نہ لکھنے کی وجہ یہی تھی کہ میں اس انتظار میں تھا کہ شاید  مجاہدین کے رہنماؤں کی طرف سے اس کی تردید اور اس افسوس ناک واقعے پر مذمت آجائے ۔۔۔۔ لیکن دجالی میڈیا کے ذریعے اس تردید  کا نشر ہونا کوئی آسان کام نہیں  ہوگا ۔۔۔۔

ہمارا گمان یہی ہے کہ سخی داتا دربار پر ہونے والےدھماکے خفیہ ایجنسیوں کی سازش ہے ۔۔۔۔ دشمنان دین مجاہدین کے خلاف اس نوعیت کی سازشیں پہلے بھی کرتے آئے ہیں ۔۔۔ لیکن اس مرتبہ کی جانے والی  سازش بہت زبردست  اور اس کے اثرات بہت تباہ کن ہیں ۔۔۔۔ یہ دشمن کا پہلا وار ہے جس کی زد واقعی مجاہدین پر براہ راست بہت گہری  پڑتی ہے ۔۔۔
پچھلی تمام سازشوں میں اب تک فرضی ترجمانوں کے ذریعے جھوٹ  کو پھیلانے کی کوشش کی جاتی رہی تھی  ۔۔۔
لیکن اس مرتبہ دشمن نے طالبان کے اصل ترجمان کا نام استعمال کرکے ، ہمیں بھی مبہوت کردیا ہے ۔۔۔۔
واللہ المستعان علینا ۔۔۔۔
اس کے بعد فرضی یا جعلی عمر فدائی کو میڈیا کے سامنے پیش کردینے نے رہی سہی کسر بھی پوری کر دی ۔۔۔
عمر فدائی کا دجالی میڈیا پر نشر ہونے والی گفتگو میں نے دیکھی ہے ۔۔۔۔ کم از کم میرے لیے اس کو حقیقت تسلیم کرلینا ممکن نہیں ۔۔۔۔ صاف محسوس ہورہا ہے کہ کسی  جعلی  فدائی کو بستر پر لٹا کر رٹے رٹائے جملے کہلوائے گئے ہیں ۔۔۔۔ واللہ اعلم ۔۔۔
یہیں تک محدود نہیں بلکہ اس کے بعد سے جو بھی اصلی یا فرضی  گرفتاریاں ہوئیں ۔۔۔۔ ان کا سلسلہ سخی داتا دربار سے جوڑا جا تارہا ۔۔۔۔ تاکہ عامۃ المسلمین کے ذہنوں میں یہ جھوٹ راسخ ہوجائے ۔۔۔۔ گذشتہ کئی روز  سے میرے لیے اخبارات میں سب سے زیادہ اہم وہی خبریں رہی ہیں جو سخی داتا دربار کے دھماکوں سے متعلق تھیں ۔۔۔ اور اس کی اہمیت کے پیش نظر دیگر خبروں سے کوئی دلچسپی ہی باقی نہیں رہی تھی ۔۔۔۔ ہم پر لازم ہے کہ ہر حال میں اللہ سبحانہ وتعالیٰ کی حمد کریں ۔۔۔۔کیونکہ تمام  معاملات کو لوٹنا اسی کی جانب ہے ۔۔۔۔۔  وہی ہے جو شر سے خیر کو برآمد کرتا ہے ۔۔۔۔

 درج ذیل اقتباسات ملاحظہ کریں ۔۔۔ اور سوچیں کہ مجاہدین کےاصولی  موقف کے بارے میں آپ کا کیا تاثر ہے ۔۔۔۔ یہ اقتباسات  شیخ عطیۃ اللہ کے تازہ بیان بعنوان خون مسلم کی عظمت سے اخذ کیے گئے ہیں ۔۔۔۔
"چاہے ہمارا وجود فنا ہو جائے ، ہماری تنظیمیں اور جماعتیں مٹ جائیں اور چاہے ہمارے سب منصوبے خاک میں مل جائیں ، لیکن ہمارے ہاتھوں سے ناحق کسی مسلمان کا خون نہ بہنے پائے "

"ہم اللہ عزو جل کی شریعت ہی کے پابند ہیں جس نے بغیر حق کے کسی نفس کے قتل کو حرام ٹھہرایا ہے ۔۔۔۔ چاہے دشمنان دین کی نفرت و دشمنی حد سے بڑھ جائے اور چاہے ان کی جانب سے وحشت و بربریت کی انتہا ہو جائے مگر اس سب کے مقابلے میں ، اللہ عزوجل کا دین اس بات سے نہایت اعلیٰ و ارفع  ہے کہ ان دشمنوں کی رذیل حرکات کا جواب اس پست سطح پر اتر کر دیا جائے ۔۔۔ اللہ تعالیٰ کی کرم و رضا کا حصول دیگر تمام مقاصد سے اعلیٰ اور معزز تر ہے "

" ہماری یہ پیاری امت آج لا دین نظام  ہائے حکومت کی ظلمتوں میں ڈوبی ہوئی ہے ۔۔۔ ایسے مرتد حکمرانوں کے ہاتھوں مجبور  و محکوم  ہے جو خائن ہیں ، دین سے باغی ہیں دشمنوں کے آلہ ء کار ہیں اور ہر دم صلیبی مغرب کے احکامات کی تعمیل میں مصروف کار ہیں ، مگر یہ امت مسلمان امت ہی ہے "

"مجاہدین کے امراء پر لازم ہے ، کہ استشہادی بھائیوں کو ان امور کی خوب نصیحت کریں ، ان کو کسی دھوکہ میں رکھنے سے  شدت سے بچیں کہ ان کو کسی ایسے ہدف پر بھیجا جائے جس کے جواز میں شک و شبہہ ہو ، ایسا کرنا ان کی خیر خواہی ہرگز نہیں ہے "

"اسی طرح استشہادی حملہ کرنے والا بھائی ، اپنے کسی اقدام کا ذمہ دار خود بھی ہے ، اگر وہ کسی ہدف پر حملہ کامل تحقیق کے بغیر اور کچھ سوچے سمجھے بغیر کرتا ہے توبجائے اس کے کہ اس کو شہادت ملے وہ خطاکار اور قابل ملامت ٹھہرے گا ۔ اللہ تعالیٰ کی پکڑ اور اس کے عقاب و عذاب کا مستحق ہوگا ۔اور ہم میں سے کون اس پر راضی ہو سکتا ہے "

"ہر ایسی مخصوص دھماکہ خیز کارروائی معتمد اور قابل  افراد پر مشتمل  مجلس کی نگرانی میں کیجیے ۔ اس مجلس میں علمائے دین بھی ہوں اور معتبر عسکری ماہرین بھی ۔ وہ کارروائی کے ہر ہر پہلو پر علیحدہ علیحدہ تحقیق کے بعد ہی فیصلہ کریں کہ اس اقدام کی اجازت دی جائے یا نہیں "

خون مسلم کی عظمت ۔۔۔۔  شیخ عطیۃ اللہ   حفظہ اللہ  
پیش کش السحاب میڈیا  ۔۔۔   ۲۰۱۱ ء  ۔۔۔

ان تمام اقتباسات کی روشنی میں ہم کیسے یہ باور کر سکتے ہیں کہ مجاہدین اپنے اصولی موقف کے برخلاف اپنی محبوب امت کے انہی مظلوم ، محکوم اور مجبورمسلمانوں کا قتل عام کرنے پر اتر آئیں جن  کے دفاع کے لیےانہوں  نے اپنے آپ کو راہ جہاد کے خطرات میں ڈال رکھا ہے ۔۔۔۔۔۔ سبحان اللہ ۔۔۔۔

اب ذرا دجالی میڈیا کی یہ  خبربھی  ملاحظہ کریں ۔۔۔ "یہ تمام بارودی مواد ، مزاروں اور درباروں کو تباہ کرنے کے لیے منتقل کیا جارہا تھا "۔۔۔۔۔ گویا مجاہدین کے پاس اب ان اہداف کے سوا کوئی ہدف ہی باقی نہیں رہا ۔۔۔۔ اور گویا مرتدین اور کفریہ حکومت کے آلہ کاروں سے ہماری جنگ ہمیشہ کے لیے ختم ہو گئی  ۔۔۔۔ واللہ المستعان ۔۔۔

اب میں آتا ہوں اس شبہہ کی طرف جو کسی کے ذہن میں پیدا ہو سکتے ہیں ۔۔۔۔ یعنی یہ بھی تو ہو سکتا ہے کہ  خدانخواستہ اس کارروائی کے پیچھے کوئی ایسا گروہ ملوث ہو  جو اپنے آپ کو مجاہدین سے منسلک سمجھتا ہے  ۔۔۔۔ تو ہم یہ کہہ سکتے ہیں کہ بے شک یہ گروہ اس  بھیانک کارروائی  کے دنیاوی اور اخروی نتائج سے بے پرواہ ہو چکا ہے  ۔۔۔۔  اور اس قسم کا ہدف بنانےوالا  اپنے آپ کو اللہ سبحانہ وتعالیٰ کی نصرت اور مدد سے محروم کرنے پر تلا ہوا ہے ۔۔۔ بلکہ اس سے آگے بڑھ کر وہ اپنے آپ کو اللہ کی پکڑ ، غضب ، عتاب و عذاب کے خطرے  میں ڈال رہا ہے ۔۔۔۔

لیکن یہ وضاحت ضروری ہے کہ ایسے کسی گروہ کی موجودگی ثابت بھی ہو جائے تو کوئی اسے اپنے لیے جہاد سے دور رکھنے  کا عذر نہیں بنا سکتا ۔۔۔۔ اگر کوئی اپنے آپ کو ایسے گروہ کی موجودگی کے سبب جہاد سے دور بٹھائے رکھنے پر راضی ہوا ۔۔۔ تو بالیقین وہ گمراہی میں پڑ گیا  ۔۔۔۔اور ترک جہاد پر اللہ سبحانہ وتعالیٰ کی وعیدوں کا مستحق ٹھہرے گا ۔۔۔

واللہ غالب علیٰ امرہ ولکن اکثر الناس لا یعلون ۔۔۔

مال غنیمت کی تقسیم پر سوال



تمام تر شکر اور حمد اس کے لیے جس نے اناج پیدا فرمایا اور روزینے مقرر کئے اور نیک اعمال پر اجر عطا فرمایا۔ درود و سلام ہو ہمارے نبی محمدﷺ پر جو واضح معجزات کے ساتھ تشریف لائے۔
اسلام علیکم ورحمۃ  اللہ وبرکاتہ
عرفان بھائی اللہ تعالیٰ سے آپکی سلامتی کی دعا گوہوں کہ اللہ آپکو ہر جگہ اپنی حفظ و امان میں رکھے۔بہت دنوں سے سوچ رہا تھا کہ آپ سے ایک بار رابطہ کرلوں لیکن کچھ مصروفیات یا غفلت کی وجہ سے تاخیر ہوگئی۔مجھے ایک سوال پوچھنا تھا آپ سے کہ آپ لوگ (مجاہدین) مال غنیمت کس طرح تقسیم کرتے ہیں۔ یہ مال غنیمت کس کو ملتا ہے  مجاہدین آپس میں بانٹ لیتے ہیں یا اور غرباء،فقراء یا مساکین کو بھی دیتے ہیں۔
بھائی سوال تو اس قابل نہیں ہے کہ پوچھا جائے لیکن میرے ذہن میں کافی گردش کررہا تھا اس لئے سوچا پوچھ ہی لوں۔امید ہے جواب سے نوازے گے۔
ہماری دعائیں آپ کے ساتھ ہیں اللہ سبحانہ وتعالیٰ ہر جگہ مجاہدین کو کامیابیاں عطا فرمائے اور اہل حق کو کفارومشرکین پر غالب فرمائے تاکہ خبیث و طیب الگ الگ ہوجائے۔
وسلام علیکم ورحمۃ اللہ وبرکاتہ
ذبیح اللہ

وعلیکم السلام ورحمۃ اللہ وبرکاتہ
ذبیح بھائی ۔۔۔ ۔ مجاہدین امت کی دعاؤں کے سب زیادہ مستحق ہیں ۔۔۔۔آپ کی  ڈھیر ساری دعاؤں کا شکریہ۔۔۔۔
اللہ تعالیٰ سے دعا ہے کہ  جو خیر آپ نے ہمارے لیے اللہ سے مانگا ۔۔۔۔ اللہ آپ کو اس سے بڑھ کر عطا فرمادے ۔۔۔
مال غنیمت کی تقسیم کا عمل مختلف صورتحال میں مختلف ہوتا ہے ۔۔۔۔لیکن اس کی جو بھی صورت ہو ۔۔۔۔ الحمدللہ مجاہدین مال غنیمت کی تقسیم شرعی قاعدے کے مطابق ہی انجام دیتے ہیں ۔۔۔
زیادہ تر تقسیم اس طرح ہوتی ہے کہ پانچواں حصہ بیت المال میں جمع ہوتا ہے جب کہ باقی چار حصے کارروائی میں حصہ لینے والے مجاہدین میں تقسیم کیا جاتا ہے ۔۔۔۔
دوسری صورت یہ ہے کہ تمام مال مجاہدین کے بیت المال میں جمع ہوجاتا ہے ۔۔۔یعنی ممکن ہو کوئی شرط ایسی موجود ہو جس  کے سبب یہ غنیمت نہیں بلکہ فے سمجھا جائے ۔۔۔۔ یا ہوسکتا ہے کہ کوئی کارروائی خاص طور پر کفار کے اموال چھیننے کے لیے کی جاتی ہو اور مجاہدین اپنی نیتیں صاف رکھنے کے لیےمال سے  دستبردار ہونے کے لیے تیار ہوں ۔۔۔حکمت کا تقاضہ نہ ہوتا تو میں ایک مثال بھی دینے کو تیار تھا ۔۔۔۔
تیسری صورت یہ بھی ممکن ہے کہ تمام مال کارروائی میں حصہ لینے والے مجاہدین کے درمیان تقسیم ہو جائے ۔۔۔
جی ہاں حیران نہ ہوں امام ابو حنیفہ رحمہ اللہ کے اقوال موجود ہیں : وہ کہتے ہیں کہ اگر مسلمانوں کا کوئی مختصر گروہ انفرادی حیثیت سے دارالکفر میں گھس جائے اور اس علاقے میں اس کی مدد کرنے والا کوئی مجاہد نہ ہو ، اور وہ مال غنیمت کے ساتھ پلٹے تو اس مال سے پانچواں حصہ نہیں نکالا جائے گا بلکہ یہ سارا مال انہی  کا ہوگا ۔ اس انفرادی عمل کو انجام دینے والوں کی تعداد نو سے کم ہو تو یہی حکم ہوگا ۔۔۔ تعداد نو ہو جانے پر یہ سریہ کہلائے گا اور پانچواں حصہ نکالنا ہوگا ۔۔۔۔۔ تفصیلات کے لیے دیکھیں انسپائر کا چوتھا شمارہ
اگر یہ کام  امیر کی اجازت سے کیا جائے گا تو خمس نکالا جائے گا ۔۔۔ اس بات کا امکان کم ہے کہ جو مجاہدین تنظیم کا حصہ ہیں وہ امیر کی اجازت کے بغیر یہ کام کریں گے ۔۔۔۔ لیکن شریعت میں اس کی اجازت موجود ہے کہ امیر کی اجازت کے بغیر دار الحرب میں گھس جائیں اور  کفار کے اموال لوٹ کر لے آئیں ۔۔۔۔  خواہ قوت سے ، چوری کر کے ، یا دھوکہ دے کر ۔۔۔۔ان تمام صورتوں کی شریعت میں اجازت موجود ہے ۔۔۔  تفصیل دیکھیے انسپائر کے چوتھے شمارے میں ۔۔۔


مجاہدین کے بیت المال کے مستحقین
غنیمت کا پانچواں حصہ  یا فے کے اموال کو مجاہدین کے بیت المال میں جمع کیا جاتا ہے اور یہ مال زیادہ تر مجاہدین کی اجتماعی ضرورتوں پر خرچ کیا جاتا ہے ۔۔۔۔ اگر کوئی یہ خیال کرے کہ غنیمت کے اموال  پر فقراء اور مساکین کا بھی حق ہے ، تو اگرچہ یہ خیال درست ہے ، لیکن خود سوچیے کہ اس وقت مجاہدین سے بڑھ کر اس مال کا مستحق کون ہوگا ۔۔۔کیا مجاہدین میں فقیر اور مساکین نہیں ؟؟؟؟۔۔۔عام معاشرے کے افراد سے زیادہ مسکین اور فقیر بھی مجاہدین کی صفوں میں موجود ہیں ۔۔۔۔  لیکن یہ اتنے خود دار ہیں کہ کسی کے سامنے دست سوال دراز نہیں کرتے ۔۔۔۔ کوشش کرتے ہیں کہ ان کی ضرورت کا احساس بھی دوسروں کو  نہ ہونے پائے ۔۔۔۔بسا اوقات کسی ضرورت مند مجاہدکی بیت المال سے مدد کی جاتی ہے تو وہ یہ جان کر کہ اس کی ضرورت بیت المال سے پوری کی جارہی ہے ، اس کو قبول کرنے سے کتراتا ہے ۔۔۔ اور پھر امیر کے اصرار پر قبول کرتا ہے ۔۔۔۔

بالفرض اگر اس  بیت المال کو مجاہدین کے لیے مخصوص کرنے کے بجائے ،  امت کا بیت المال تصور کیا جائے  تو ایسی صورت میں بھی مجاہدین اس کے حق سے محروم نہیں ہو سکتے کیونکہ بیت المال کے مستحقین وہی ہیں جو سورۃ البقرۃ میں زکوٰۃ کے مستحقین کی ذیل میں آتے ہیں ۔۔۔۔اللہ تعالیٰ نے کل آٹھ مستحقین گنوائے ہیں ، جن میں سے ایک خود مجاہدین فی سبیل اللہ بھی ہیں ۔۔۔۔ اس لیے بیت المال کے اموال کو امت کے فقراء اور مساکین کو نظر انداز کر کے صرف مجاہدین کی ضرورتوں پر بھی پورا کیا جائے تو یہ شریعت سے متصادم نہیں ۔۔۔۔ بلکہ بعض علماء نے تو یہاں تک لکھا ہے کہ جب جہاد فرض عین ہو تو مسلمانوں کی قحط زدہ بستی کی مدد کرنے سے بہتر ہے کہ دفاعی جہاد کا فریضہ انجام دینے والے مجاہدین کو اموال دیے جائیں ۔۔۔۔خواہ قحط زدہ علاقوں میں بھوک اور افلاس کے ہاتھوں مسلمانوں کی ہلاکت کا  خطرہ ہو ۔۔۔۔ یہ رائے ہے ہمارے علماء کی ۔۔۔  بہرحال اصلاً یہ حقیقی صورتحال پر منحصر ہے ۔۔۔ یعنی فی الواقعہ مجاہدین کو اموال کی ضرورت باقی ہو ۔۔۔۔ وغیرہ وغیرہ ۔۔۔واللہ اعلم ۔۔۔

آج کی حقیقی صورتحال کیا ہے اس کے بارے میں  شیخ انوار العولقی حفظہ اللہ فرماتے ہیں کہ فی زمانہ چار وجوہات سے مجاہدین مسلمانوں کی زکوٰۃ کے  سب سے بڑھ کر مستحق ہوتے ہیں ۔۔۔۔
۱) یہ فقراء ہیں  ۲) یہ مساکین ہیں   ۳) یہ مسافر ہیں  اور ۴) یہ اللہ کے راستے کے مسافر ہیں ۔۔۔۔

اگرچہ یہ فتویٰ زکوۃ کے متعلق ہے ۔۔۔ لیکن یہاں عرض کرنے کا مطلب یہ ہے کہ فقیر اور مسکین تو خود مجاہدین بھی ہیں ۔۔۔جب زکوٰۃ کے اموال کے سب سے بڑھ کر مستحق مجاہدین ہیں تو غنیمت کے اموال کا حقدار بھی ان سے زیادہ کون ہو سکتا ہے ۔۔۔ ؟؟؟؟
والسلام

Saturday, April 9, 2011

انسپائر کا پانچویں شمارہ : انگریزی


الملاحم میڈیا کی پیش کش
انسپائر کا پانچویں شمارہ  : انگریزی
جزاک اللہ

5th issue of inspire
Download Link

password
Ryi2HJcdioDFRtendskG4Gh

دعاؤں کے طلب گار
غزوہ ہند بلاگ ٹیم 

ہندوستانی مجاہدین


عرفان بھائی السلام علیکم
میں نارتھ انڈیا سے تعلق رکھتا ہوں اور میں جہاد کے لیے فارن کنٹری جانا چاہتا ہوں لیکن امی اجازت نہیں دیتیں کہتی ہیں کہ میں تمہیں معاف نہیں کروں گی ؟ کیا میں غزوہ ہند کا انتظار کروں بھارت میں ؟

وعلیکم السلام ورحمۃ اللہ وبرکاتہ

جب جہاد فرض عین ہو تو اس کے لیے والدین کی اجازت ضروری نہیں ہوتی ۔۔۔ آگے آپ کی مرضی ہے ۔۔۔ بہتر ہے کہ آپ جہاد کی فرضیت کے حوالے سے کتابوں کا مطالعہ کریں اور اپنی والدہ کو بھی کتاب پڑھائیں ۔۔۔ اگر اللہ نے چاہا تو ان کی سمجھ میں آجائے گا ۔۔۔۔ اپنی والدہ کو بتائیں کہ ہماری امت میں اب بھی ایسی مائیں موجود ہیں جو ہمیں درخواستیں بھجواتی ہیں کہ میرا بیٹا بڑا ہوگیا ہے پلیز آپ لوگ اس  کو بھی اپنے ساتھ محاذ پر لے جاؤ ۔۔۔ اگر ہم منع کرتے ہیں تو اصرار کرتی ہیں ۔۔۔ شہید ہو جائے تو آنسو نہیں بہاتیں بلکہ فخر کرتی ہیں ۔۔۔ الحمدللہ ۔۔۔۔ ہمیں ایسی ہی عظیم ماؤں کی ضرورت ہے ۔۔۔ ایسی ہی ماؤں کی موجودگی سے جہاد زندہ ہے ۔۔۔۔  چند دن پہلے ہی مجھے کسی کے والدین کی طرف سے درخواست ملی تھی کہ ہمارے سترہ سالہ بیٹے کو جہاد پر بھجوا دیں ۔۔۔۔ اسی چیز سے تو دشمن خوف کھاتا ہے ۔۔۔  ایک  ہندوستانی بھائی کی ای میل کے بعد سے میں آپ کے لیے ہندوستان کی خفیہ ایجنسیوں کی طرف سے فکر مند ہوں  ۔۔۔۔ اللہ تعالیٰ آپ کی اور  دنیا بھر کے مجاہدین کی حفاظت کرے ۔۔۔۔  آمین ۔۔۔

------------
ایک اور ہندوستانی بھائی کو جواب

آپ نے بتایا ہے کہ آپ بڑی مشکل میں ہیں ۔۔۔ ہندوستانی حکومت اور خفیہ ایجنسیاں آپ لوگوں کو تنگ کر رہی ہیں ۔۔۔
میں پوری کوشش کروں گا کہ آپ کو دعاؤں میں یاد رکھوں ۔۔۔ دیگر مجاہد بھائیوں سے بھی آپ کے لیے دعا کی درخواست کرتا ہوں ۔۔۔۔ بے شک دعاؤں میں اثر ہے ۔۔۔
میں کوشش کروں گا کہ آپ کا رابطہ جلد از جلد ہندوستان میں ہمارے مجاہد بھائیوں سے ہو جائے
ہندوستانی مجاہد بھائیوں کی مدد کے لیے میں نے تین روز قبل مجاہدین کو درخواست بھجوا دی ہے
یہ بات آپ کے ذہن میں رہے کہ پاکستانی مجاہدین بھی ان خطرات میں ہوتے ہیں اور امنیات کی وجہ سے ہمارے آپس کے رابطہ اتنے تیز رفتار نہیں ہیں ۔۔۔ یہ مجھے بھی معلوم نہیں کہ ذمہ داران تک یہ درخواست کب تک پہنچ سکے گی
اس دوران میں کوشش کر رہا ہوں کہ کوئی با اعتماد ڈیٹا انکریپشن سوفٹ وئیر حاصل کر لوں
اس کی ایک پبلک کی میں آپ کو بھیجوں گا اور دوسری آپ مجھ کو بھیجیں گے ۔۔۔ تاکہ کفار و مرتدین ہماری درمیان ہونے والی گفتگو تک نہ پہنچ سکیں ۔۔۔  اس کے بعد ہمارے مجاہد ساتھی آپ تک پہنچنے کی کوشش کریں گے ۔۔۔ لیکن ہم اپنے مجاہد ساتھیوں کے بے نقاب نہیں کرتے ۔۔۔۔ اس رابطہ کے لیے آپ کو یہ خطرہ لینا ہوگا کہ اپنے بارے میں ہندوستانی مجاہدین کو معلومات فراہم کریں  تاکہ وہ آپ کے بارے میں معلومات کروا کر اطمنان کر لیں ۔۔۔۔ یہ تمام کام سست روی سے ہوتے ہیں جلد بازی میں نہیں ہوتے ۔۔۔۔ اگر آپ کے پاس کوئی اور تیز رفتار ذریعہ ہے تو آپ اپنی کوشش بھی جاری رکھ سکتے ہیں ۔۔۔۔
امید ہے کہ تین سے چار دن میں فائل انکرپشن کی معلومات بلاگ پر پوسٹ کرسکوں گا ۔۔۔ انشاء اللہ
جب آپ نے ای میل دوسرے بھائی کو بھیج دی تھی تو مجھے بھی اسی ای میل پر کاپی بھیجنے کی کیا ضرورت تھی
مجھے اس ای میل پر آپ صرف یہ خبر کیا کریں کہ ۔۔۔ میں اپنے ساتھی سے کہوں کہ وہ ای میل چیک کر لیں ۔۔۔
آپ میری عرفان بلوچ والی آئی ڈی سے دور دور رہیں ۔۔۔ یہ خطرے سے خالی نہیں ہے ۔۔۔
آخر میں آپ نے انٹرنیٹ کو احتیاط سے استعمال کرنے کا طریقہ پوچھا ہے ۔۔۔۔اس موضوع پر میری تمام پوسٹ دیکھ لیں اس کے لیے عنوانات کی فہرست میں "تکنیکی معاونت " پر کلک کریں

والسلام
------------
تبصرہ نگار بہن کی خدمت میں

وعلیکم السلام ورحمۃ اللہ وبرکاتہ
آپ نے لکھا تھا کہ طالبان کی حکومت اور اسلامی حکومت میں کوئی فرق ہے ، اگر ہے تو بیان کریں ؟؟؟؟
اصولی طور پر آپ کا سوال غلط تھا ۔۔ وہ اس طرح ہونا چاہیے تھا ۔۔ کیا طالبان کی حکومت اسلامی حکومت تھی ۔۔۔ اس کے بعد متصلا دوسرا سوال ہو سکتا تھا کہ اگر اسلامی حکومت تھی تو کیا طالبان کے دور امارت میں ان سے کوئی غیر اسلامی عمل بھی سرزد ہوا؟؟؟؟
مجھے معلوم ہے کہ آپ طالبان کی ہمدرد ہیں ۔۔۔ لیکن مجھے آپ کا سوال پسند نہیں آیا تھا اس لیے اس کا ایسا روکھا سا جواب دیا تھا ۔۔۔ آپ کے الفاظ کچھ اسی انداز کے تھے جیسے چیلنج کیا جارہا ہو ۔۔۔ بہر حال آپ کی دل آزاری ہوئی تو معافی چاہتا ہوں ۔۔۔۔
مجھے یہ سوال سخت ناپسند ہے ۔۔۔ کیونکہ یہ بات عقل میں نہیں سماتی کہ ہم کیسے ان کی غلطیاں تلاش کریں جو پہلے ہی جھوٹے پروپگینڈے اور بے ہودہ الزامات کی زد میں ہیں ۔۔۔ جب کہ وہ اس امت کے محسنین ہیں ، اور ہمارے محبوب مجاہد ساتھی  بھی ۔۔۔۔
امید ہے اب آپ کی تشفی ہوگئی ہوگی  ۔۔۔۔ مجھےمجاہدین  طالبان سے محبت ہے اس کو نہ آزمائیں ۔۔۔۔

Sunday, April 3, 2011

اردو ٹائپنگ کیسے کی جاتی ہے



اب اردو ٹائپنگ کی سہولت ہر ونڈوز کے ساتھ آتی ہے لیکن وہ خود سے انسٹال نہیں ہوتی
سب سے پہلے اردو کی بورڈ اور اردو ٹائپنگ کی سہولت اپنی ونڈوز میں انسٹال کریں۔
ونڈوز وسٹا اور ونڈوز سیون کے لیے
اگر انسٹالیشن کے درمیان ونڈوز کی سی ڈی مانگے تو سی ڈی ڈرائیو میں ونڈوز کی سی ڈی ڈالیں
کنٹرول پینل کھولیں
ریجنل اینڈ لینگویج پر ڈبل کلک کریں


اس کے بعد کی بورڈ اینڈ لینگویج کے ٹیب پر کلک کریں ، اور وہاں موجود چینج کی بورڈ کے بٹن کو پریس کریں


اب  انسٹال سروس کے خانے میں ایڈ کے بٹن پر کلک کریں

ایڈ انپٹ لینگویج کا بوکس کھل جائے گا ۔۔۔ اس میں نیچے جا کر اردو لینگویج اور اردو کی بورڈ سیلیکٹ کریں

آپ کو اس تصویر میں فونیٹک کی بورڈ بھی نظر آرہا ہے جو آپ کے پاس نہیں ہوگا ۔۔۔ چنانچہ اردو سروس انسٹال کرنے کے بعد گوگل پر اردو فونیٹک کی بورڈ سرچ کریں ، اور اس کو انسٹال کرنے کے بعد اردو ٹائپنگ کرنے کے لیے فونیٹک کا استعمال کریں ۔

یہ جاننے کے لیے کہ کون سا حرف کہاں ہے ، ونڈوز میں کی بورڈ لکھ کر سرچ کریں اور آن سکرین کی بورڈ اوپن کر لیں ، شروع شروع میں آن سکرین کی بورڈ کا استعمال مفید ہوتا ہے ۔۔۔۔


Saturday, April 2, 2011

ای میل اور تبصرے



السلام علیکم
۱۔ عاصم عمر کی کتابیں حقیقت پر مبنی ہیں یا نہیں ۔۔۔ کیا ان کا تعلق واقعی اہل حق کے ساتھ ہے ؟
۲۔ مولانا فضل الرحمن کا تعلق واقعی اہل حق کے ساتھ ہے یا نہیں ؟
۳۔ القاعدہ میں شمولیت کا کیا طریقہ کار ہے اور کیسے ان سے ملا جائے ؟
وعلیکم السلام ورحمۃ اللہ وبرکاتہ
۱۔  عاصم عمر کے متعلق مجاہدین کے مجموعی خیالات اچھے ہیں ، ہم تو یہی سمجھتے ہیں کہ وہ اہل حق میں سے ہیں دل کے حال سے صرف اللہ ہی واقف ہیں ۔ عاصم عمر کی بعض کتابوں میں اڑن طشتریوں اور اس جیسے کئی دیگر غیر مرئی خیالات کو ایسے بیان کیا گیا ہے جیسے وہ حقائق ہیں حالانکہ ان معلومات کا ماخذ مغرب سے درآمد شدہ ہے ۔ البتہ مولانا عاصم عمر کی سب سے پہلی کتاب تیسری جنگ عظیم اور دجال نہایت عمدہ کتاب ہے ۔ کیونکہ اس کتاب کا ماخذ احادیث رسول صلی اللہ علیہ وسلم ہیں ۔
۲۔ یہ سوال تو فضل الرحمن سے پوچھنا چاہیے ؟
۳۔ القاعدہ میں شمولیت کے لیے ، تنظیم کے اندر سے سفارش ہونا ضروری ہے ۔۔۔ سفارش بھی صرف اس کی قبول کی جاتی ہے جو آپ سے اچھی طرح واقف ہو ۔۔۔ اگر آپ یہ کہیں کہ میں القاعدہ کے کسی مجاہد سے واقف نہیں ، تو یہ بات غلط ہو سکتی ہے ، ممکن ہے کہ آپ کے واقف کاروں میں سے کئی افراد القاعدہ یادیگر مجاہدین سے منسلک ہوں ، ایسے جن افراد پر آپ کا شک ہو آپ ان سے اپنی خواہش کا ذکر کریں ، انشاء اللہ وہ آپ کی رہنمائی کر دیں گے ۔۔۔۔

::: ::: ::: ::: ::: ::: ::: :::
عرفان بھائی ابھی بتاو کہ فضل الرحمان کے قافلے پر جو حملہ ھوا وہ اچھا ھوا کہ نہیں؟ یہ اس بات کی دلیل ھے کہ مجاھدین ان کے مخالف ہے.ابھی دیکھو سب کچہ ظاھر ھوا. ان دھماکے کے بارے میں مجھے ضرور جواب دیں؛
ابو البراء
میں نے یہ کب کہا کہ مجاہدین فضل الرحمن کے مخالف نہیں ہیں ۔۔۔ جو کچھ کہا تھا وہ صرف یہ تھا کہ بعض شخصیات سے اسلحہ سے نہیں قلم سے لڑا جاتا ہے ۔۔۔
دوسری بات یہ ہے کہ آپ نے فضل الرحمن اور منور حسن کے بارے میں ایک ہی طرح کا سوال پوچھا تھا، میرا خیال ہے کہ فضل الرحمن اور منور حسن کو ایک ہی نظر سے دیکھنا ٹھیک نہیں ہے ۔۔۔
فضل الرحمن اس کے مقابلے میں انتہائی سنگین جرائم میں ملوث ہے ۔۔۔ اور اس کی سیاست کرپشن سے خالی نہیں ۔۔۔ بلکہ وکی لیکس کے انکشافات میں سے ایک یہ بھی تھا کہ اس شخص نے امریکہ سے وزیر اعظم کا عہدہ بھی طلب کیا تھا ، بلکہ صحیح الفاظ میں جھولی پھیلا کر بھیک مانگی تھی ۔۔۔
فضل الرحمن جتنا بھی مذہب کا رنگ لگائے حقیقت یہ ہے کہ خود مذہبی حلقوں میں فضل الرحمن انتہائی ناپسندیدہ ترین شخصیات میں شامل ہو چکا ہے ۔۔۔ ہو سکتا ہے مجاہدین نے سوچا ہو یہ مناسب وقت ہے ۔۔۔
::: ::: ::: ::: ::: ::: ::: :::
السلام علیکم ۔۔
۱۔ یہ بتائیں کہ طالبان حکومت اور اسلامی حکومت میں کوئی فرق ہے ؟ اگر کوئی معمولی سا بھی فرق ہے تو بتا دیں ؟
۲۔ لندن، برطانیہ سے تعلق رکھنے والے  لو کی کے بارے میں معلومات حاصل کے کے بتائیں کہ وہ کون ہے ، کیوں ہے ، کیسے ہے اور جیل میں کیوں نہیں ہے ؟ اس کا گانا اوبامہ نیشن سن کر بتائیے گا
۳: امریکہ اور برطانیہ میں بہت سے لوگ یہ چاہتے ہیں کہ ان کی افواج افغانستان ، عراق وغیرہ سے واپس آجائیں؟ کیا ہر ایکشن ان باتوں کو مد نظر رکھ کر لیا جاتا ہے ؟
وعلیکم السلام ورحمۃ اللہ وبرکاتہ
۱: یہ سوال کے بجائے ایک چیلنج لگ رہا ہے ، مجھے یہ چیلنج قبول نہیں ۔۔
۲:لوکی نے اب تک کوئی ایسا جرم نہیں کیا ہے جس پر اسے جیل ہوجائے ، اوبامہ یا امریکہ کے خلاف آواز اٹھانے پر کوئی جیل میں نہیں چلا جاتا ، ہاں ہتھیار اٹھانا منع ہے ۔
۳: میں نے اب تک کوئی ایکشن نہیں لیا ، لیکن جو لوگ لیتے ہیں ان کے متعلق ہمیں بھروسہ رکھنا چاہیے کہ وہ ان سب باتوں کو جانتے ہیں ، اور اپنے علماء سے پوچھ پوچھ کر قدم اٹھاتے ہیں ۔۔
::: ::: ::: ::: ::: ::: ::: :::
الحمدللہ ایسے کئی افراد ہیں جنہوں نے ای میل پر رابطہ کر کے مجھ سے دریافت کیا ہے کہ مجاہدین کے ساتھ کیسے شامل ہوا جائے ، اور اس سلسلے میں ان کی رہنمائی کی جائے ۔۔۔ لہٰذا ایک ہی سوال پر جوابات بار بار دہرانے کی ضرورت نہیں ہے ۔

ایک دوسرے مجاہد ساتھی پاکستانی جہادی تنظیموں ، جیش، بدر، حزب ، لشکر وغیرہ کے ساتھ ٹریننگ لینے سے متعلق میری رائے پر متفق نہیں ہیں ۔۔۔ بھائی یہ میرا صرف مشورہ تھا اور میں نے کوشش یہی کی تھی کہ اخلاص کے ساتھ اپنے ساتھی کو جواب دوں ۔۔۔ اگر آپ سمجھتے ہیں کہ اس میں کوئی نقصان نہیں تو آپ وہاں تربیت لے سکتے ہیں ۔۔۔ ۔

ہندوستان کے مجاہد ساتھی چاہتے ہیں کہ ان کی رہنمائی کی جائے اس بلاگ کے توسط سے میری درخواست ہے کہ اس موضوع پر تحاریر لکھ کر مجھے روانہ کریں ۔۔۔۔ تاکہ میں اسے بلاگ پر پوسٹ کرسکوں ۔۔۔جزاک اللہ 

آپ کی دعاؤں کا طلب گار
عرفان بلوچ