Subscribe:

Monday, December 12, 2011

جہادی میڈیا کا قابل فخر شہسوار


 مورخہ ۱۹ نومبر کے اخبارات اور دیگر میڈیا ذرائع کے مطابق کراچی کے علاقے گلستان جوہر کے ایک فلیٹ میں  مقیم یمنی نژاد مجاہد ساتھی ۔۔۔ عبد المعید عبد السلام عرف " ابو عمر "  بھائی ۔۔۔ ۱۸ نومبر کی رات پولیس اور رینجرز  کے ساتھ معرکہ کے دوران ہینڈ گرنیڈ پھٹ جانے سے شہید ہو گئے ۔ اللہ تعالیٰ ان کی شہادت قبول فرمائیں ۔۔

جہادی میڈیا ذرائع میں سے ایک معروف ادارے  گلوبل اسلامک میڈیا فرنٹ نے عبد المعید بھائی کی شہادت کی باقاعدہ تصدیق کر دی ہے ۔ گلوبل اسلامک میڈیا فرنٹ بنیادی طور پر  القاعدہ اور  دیگر جہادی تنظیموں کے رہنماؤں کے بیانات جاری کرنے اور مختلف زبانوں میں ان کے ترجمے پیش کرنے کا بااعتماد ادارہ ہے ۔ گلوبل اسلامک میڈیا فرنٹ نے  ان کی شہادت کی خوش خبری ان الفاظ کے ساتھ جاری کی  :::::

" ہم عام طور پر امت مسلمہ کو اور خاص طور پر مجاہدین کو مطلع کرتے ہیں کہ ،  گلوبل اسلامک میڈیا فرنٹ کے قائد  ین میں سے ایک اور جہادی میڈیا اور جہادی فورمز کے ایک قابل فخر شہسوار اللہ کے راستے میں شہادت پا چکے ہیں "

گلوبل اسلامک میڈیا فرنٹ نےعبدالمعید عرف  ابو عمر بھائی کے بارے میں جو تفصیلات شائع کی ہیں ان کے مطابق ۔ عبدالمعید شہید رحمہ اللہ ۱۷ جولائی ۱۹۷۴ کو پیدا ہوئے  ، آپ کی پرورش مالی طور پر ایک مضبوط گھرانے میں ہوئی ۔  عبدالمعید بھائی نے یمن اور امریکہ کی مختلف ملٹی نیشنل کمپنیوں میں ملازمت کی ۔ آپ  نہ صرف خود امریکی شہریت رکھتے تھے بلکہ آپ  نے اپنے والدین کے لیے بھی امریکی شہریت حاصل کر رکھی تھی ۔عبدالمعید شہید رحمہ اللہ نے سعودی ائر لائن میں ۱۸ سال فلائٹ انجینئر کے طور پر خدمات انجام دیں ۔ القاعدہ کی بنیاد اور اس کے منظر عام پر آنے سے پہلے عبدالمعید رحمہ اللہ مصر کی اسلامی جہاد سے وابستہ ہو گئے تھے  لیکن عملا کبھی معرکوں میں شریک نہیں ہوئے تھے ۔  نیویارک اور واشنگٹن کے مبارک حملوں کے بعد  آپ نے مجاہدین کے ساتھ شامل ہونے کا مضبوط ارادہ کر لیا  اوراس کے ساتھ آپ کی عملی زندگی میں بڑی تبدیلی واقع ہو گئی ۔ اپنے ارادوں کو عملی جامہ پہنانے کے لیے آپ نے امریکہ اور آرام  دہ زندگی کو خیر باد کہہ دیا ۔ پہلے آپ امریکہ سے سعودی عرب منتقل ہو گئے ۔ پھر یہاں سے مجاہدین کو تلاش کرنا شروع کیا ۔ اسی دوران آپ کا  مجاہدین کے مختلف حلقوں سے رابطہ ہوگیا اور آپ ان رابطوں کو مضبوط بنانے کے لیے مختلف مسلمان ممالک کا سفر کرتے رہے  ۔آپ کے پاس سعودی شہریت بھی تھی لیکن گذشتہ کئی سال سے آپ پاکستان میں مقیم تھے ۔

عبدالمعید شہید رحمہ اللہ نے ۱۹۹۶ میں ایک پاکستانی خاتون حمیرا سے شادی کی ۔ جن سے شہید کے تین بیٹے اور ایک بیٹی موجود ہیں ۔  اردو زبان پر عبور ہونے اور پاکستانی بیوی اور بچوں کو وجہ سے آپ کو پاکستان میں اجنبی نہ سمجھا جاتا تھا ۔ عربی ، انگریزی اور اردو کے علاوہ بھی عبدالمعید بھائی کو دنیا کی کئی دیگر زبانوں پر عبور حاصل تھا ۔

انٹرنیٹ اور انفارمیشن ٹیکنالوجی کے میدان میں آپ کے صلاحیتوں کے پیش نظر القاعدہ کے رہنماؤں نے عبدالمعید عرف ابو عمر شہید ؒ  کو میڈیا اور پروپگینڈا مہم کی مستقل ذمہ داری سونپ رکھی تھی ۔ قائدین کے بیانات انٹرنیٹ پر جاری کرنے کے علاوہ آپ کی ذمہ داریوں میں ، مختلف جہادی میڈیا کو آپس میں مربوط رکھنا اور ان بیانات کے تراجم پیش کرنا بھی شامل تھا ۔خاص طور پر انگریزی تراجم کے لیے گلوبل اسلامک میڈیا میں آپ کی ذمہ داری متعین تھی ۔ اپنی ذمہ داریوں کو نبھانے کی خاطر ابو عمر شہید ؒاکثر  یمن  اور افریقی ممالک کے سفر میں رہتے تھے ۔

تیکنالوجی کے میدان میں امریکہ کی تمام تر برتری اور انٹرنیٹ کی دنیا میں حتی الامکان سرویلنس کے باوجود آپ نے   گذشتہ کئی سالوں سے امریکہ  کی آنکھوں میں دھول جھونکے رکھی اورمختلف جہادی فورمز کو کامیابی کے ساتھ چلاتے رہے ۔ اردو جہادی میڈیا میں باب الاسلام فورم کا حالیہ اضافہ بھی ابو عمر بھائی کی کاوشوں کا نتیجہ تھی ۔

برصغیر ہندو پاک کے لیے اردو زبان میں تراجم پیش کرنے کے لیے پاکستانی مجاہدین کے ساتھ مل کر قادسیہ فاؤنڈیشن کا قیام بھی آپ  کی خدمات میں سے ایک ہے ۔

اللہ تعالیٰ آپ کی خدمات اور کاوشوں کو سند قبولیت  عطا فرمائے ۔۔۔ آمین ۔۔

آپ کی سب سے مفید خدمت یہ تھی کہ آپ نے جہادی میڈیا کے کام کو پھیلانے کے لیے بہت سے مجاہد ساتھیوں کی تربیت کی ۔ آپ ابتدائی کام اپنی نگرانی میں کرواتے یہاں تک آپ کے ساتھی اس کام مہارت حاصل کر لیں ۔ابو عمر کے تربیت یافتہ اور ان کے راستے کی  پیروی کرنے والے بہت سے ساتھی آج  اس کام میں مصروف ہیں۔

جہادی میڈیا میں آپ کی خدمات کو دیکھ کر ہم کہہ سکتے ہیں کہ اللہ کی مدد اور نصرت  سے شہید ابو عمر رحمہ اللہ نے جہادی فورمز اور ویب سائٹس کی قیادت باحسن انجام دی۔۔۔۔  دشمن کے ساتھ میڈیا کی خوفناک جنگ لڑی  ۔۔۔۔ اس کام کی بہترین منصوبہ بندی مکمل کی ۔۔۔۔  ۔۔۔۔  اس کے تکبر کے گڑھوں کو خاک میں ملا دیا ۔۔۔۔   میڈیا کے متعلق اس کے عزم کو کمزور کر دیا ۔۔۔۔ اور دشمن پر  اپنی برتری قائم کر دی  ۔۔۔

ولله الحمد و المنة

اللہ تعالیٰ اپنے راستے میں آپ کی عبادت ، جہاد اور  شہادت کو قبول فرما لے اور آپ کو ہمیشہ ہمیشہ کے لیے جنت کے عیش کدوں میں داخل کر دے ۔۔۔ آمین ۔۔۔
آپ کو شہادت مبارک ہو ۔۔۔اے !!  میڈیا کے سالار ۔۔۔

آپ کا بھائی

عرفان بلوچ

7 تبصرے:

Behna Ji said...

السلام عليكم ورحمة الله وبركاته
الله میرے بھائی ابو عمر کو جنت الفردوس میں جگہ دے آمین . اور انکی جگہ میرے اوربہت سے بھائی آگے آ جائیں آمین.
انکی زندگی ہمارے لئے ایک نمونہ ہے .الله ہم سب کو حق پسند،حق پرست اور حق گو بننے کی توفیق عطا فرماے . آمین

Anonymous said...

salam irfan baloch bhai,,
Allah moeed bhai ki shahadat ko qabool kare.. (ameen).
sub se pehle shukriya darkhawast ko fori qabool karne ka.
bhai app ne apny qalam ka haq ada kar diya (masahallah). kiya rishta tha hamara moeed bhai se islam ke siwa kuch nahi yaqeenan ye islam hi jo momeenen ke liye dostiyan aur dushmania muqarar karta ha. irfan bhai bohat afsoos ke sath yaad karwana par raha ha ke jab karavhi main navy officer qatal wali baat chali tou munafiqeen bohat khush hoe tha ke ye loog tou aik dousre ko hi jawab de rahe han. magar moeed bhai ne bab par wo tamam posts hatwa di thi jo app ke bare bhi (ilawa uss ke jo nasihate thi). aur ajj ki app ki tehreer jahan us mard e momin ko khiraj e tahseen ha. wahee munafiqqen ke moun par thapar.

allah app ki abu jamal bhai ki aur media main barsare peekar dosre tamam mujahideen ki hifazat kare...(ameen)

talha abdullah

عرفان بلوچ said...

طلحہ بھائی !!
وعلیکم السلام ورحمۃ اللہ وبرکاتہ
یہ جانتے ہوئے کہ معید بھائی ہی دراصل باب الاسلام فورم کے منتظم ہیں ان کی خدمات پر خراج تحسین پیش کرنا اور ان کو شہادت کی مبارک باد دینا میرے لیے اور بھی ضروری ہو گیا تھا ۔ اور یہ اس محبت کی وجہ سے ہے جو اللہ تعالیٰ نے ان کے لیے میرے دل میں پیدا کی تھی ۔ معید بھائی تو میرے شفیق بھائی ، قابل احترام استاد اور عظیم قائد ہیں ۔ اور اب تو شہادت کا عظیم مرتبہ پالینے کے بعد اور بھی معتبر ہو گئے ہیں ۔ ( نحسبہ کذالک )

آپس کے اختلافات میں اہل ایمان کا طرزعمل سب سے انوکھا ہے اور وہ یہ کہ امت کی اجتماعی خیر خواہی میں اپنے موقف سے دستبردار ہونے کے لیے تیار ہوتے ہیں ۔ ان کی محبت اللہ کی خاطر ہوتی ہے جس کی وجہ سے اس محبت میں کمی نہیں آپاتی ۔ آپ کی بات سو فیصد درست ہے کہ یہی منافقین کے لیے سخت کڑوا زہر ہے ۔

اللہ سبحانہ وتعالیٰ اہل ایمان کو ہدایت کے راستے پر مضبوطی سے جما دیں اور ان کے درمیان اتحاد و اتفاق ہمیشہ کے لیے قائم رہے ۔ اللہ تعالیٰ ہمیں ظالموں سے معید بھائی کی شہادت کا بھرپور بدلہ لینے کی توفیق بھی عنایت کریں ۔۔۔ آمین ۔۔۔۔

زیب خان مجاہد said...

اسلام علیکم
سمجھ نہیں آتا تعزیت میں کیا کہے۔
اللہ اس کارواں میں شامل ہونے والے شہدا کو قبول فرمائے اور ہمیں بھی شہادت کی موت عطا فرمائے تاکہ یہ غمگین دل ہمیشہ کے لئے صابر ہوجائے۔
وسلام۔

زیب خان مجاہد
ترجمان تحریک طالبان افغانستان

Anonymous said...

IRFAN BHAI AUR ZAIB BHAI beshak app ne ALLAH ke hukam se such kha.

AZEEM HAN SALLEB PAR MUSKORANE WALE.

MOEED BHAI AUR APP JAESE LOGO NE KUFFAR KO UN KE HOME GROUND (MEDIA AUR INTERNET) PAR LALKARA HA. ALLAH APP KI MAHNATE QABOOL KARE.

BESHAK MUJAHIDEEN AUR UN KE MADADGAR HI HAMRI BEHTREEN DUAOO AUR MAAL KE HAQDAAR HAN
WASALAM

TALHA ABDULLAH

Anonymous said...

اسلام علیکم
عرفان مجاھد بھائی بہت دکھ ہوا ہے پڑھ کر
اللہ انکی شہادت کو قبول فرمائے
اللہ مجھے بھی مجاہدہ اسلام بنائے
میں انشااللہ اپنی ہر بچے کو مجاھد بناؤنگی۔
میں نے شیخ اسامہ کی شہادت سے یہ عزم مضبوط کرلیا تھا اور انشااللہ قائم رہونگی۔
آپکی بہن
فاطمہ مسلمہ مجاهدہ

ابو جہاد said...

تری شہادت نے پیارے بھائی
ہمیں نیا ولولہ دیا ہے

ہمیں قسم ہے ترے لہو کی
کہ تیرا بدلہ ضرور لیں گے

چکائیں گے تیرے خون کی قیمت
عدو کے سینے کو چاک کر کے

اندھیری راہ میں چراغ بن کر
تو ہم کو رستہ دکھا رہا ہے

تبصرہ کریں

آپ کے مفید مشوروں اور تجاویز کی ضرورت ہے
آپ اپنی شکایات سے بھی آگاہ کر سکتے ہیں
بحثوں میں مخالفت بھی کر سکتے ہیں لیکن حدود و قیود کے ساتھ
جزاک اللہ