Subscribe:

Tuesday, March 6, 2012

زنجبار میں یمنی فوج کا بھاری نقصان


زنجبار ۔ یمن
 ۶  مارچ    ۲۰۱۲

اللہ اکبر !!! اللہ اکبر !!!

یمن کے جنوبی صوبے ابین کے علاقے زنجبار میں مجاہدین نے مرتد یمنی افواج کے خلاف ایک بہت بڑی کارروائی سر انجام دی ہے ۔ اللہ کی نصرت سے ہمارے یمنی مجاہد بھائیوں نے اس معرکہ میں مرتدین کی ایک بڑی تعداد کو ہلاک کر دیااور زندہ بچ جانے والے درجنوں فوجیوں کو گرفتار کر کے اپنے ساتھ لے گئے ۔

فوجی حکام اور مقامی ہسپتالوں کے ڈاکٹروں نے فوج کے بھاری نقصان کی تصدیق کر دی ہے ۔ ہلاک ہونے والے فوجیوں کی زیادہ سے زیادہ تعداد ایک سے سات (۱۰۷) ہے جو اخباری ذرائع سے معلوم ہو  سکی ہے ۔ ان اخباری ذرائع نے اس خوں ریز لڑائی میں بتیس (۳۲) مجاہدین کے شہید ہونے کا بھی دعویٰ کیا ہے ۔اللہ پاک ہمارےتمام شہداء کی میزبانی فرمائیں ۔۔۔۔آمین۔۔۔

[        یہ خبر بلاگ پر پوسٹ ہونے سے قبل الجزیرہ نے تعداد میں اضافہ کرتے ہوئےمزید  بتایا کہ یمنی فوج کے بڑے افسران نے اب تک مختلف علاقوں سے ایک سو پچاسی (۱۸۵)  سپاہیوں کی لاشیں ملنے کی تصدیق کردی ہے                 ]
الحمدللہ کثیرا !!!!

ہمارے یہ مجاہد ساتھی معرکہ کے بعد قریبی شہر جعار پہنچے جہاں اس شاندار فتح پر عامۃ المسلمین نے ان کا  تکبیر کے نعروں سے والہانہ استقبال کیا ۔ یاد رہے کہ جعار ابین کا وہ شہر ہے جہاں گذشتہ ایک سال سے مجاہدین کا مکمل قبضہ ہے ۔یہ شہر زنجبار سے پندرہ کلو میٹر شمال  میں واقع ہے ۔  مجاہدین نے میگا فون کے ذریعے جعار میں ،  زنجبار کی فتح کے اعلانات نشر کیے اور گرفتار فوجیوں کو یہاں کی سڑکوں پر پریڈ مارچ کروایا گیا ۔




یمنی فوجیوں کی بغاوت اور مجاہدین کے لیے جاسوسی

یمنی صحافی ، حاکم مسمری نے الجزیرہ ٹیلی وژن سے بات کرتے ہوئے اس بات کی تصدیق کی ہے کہ انہیں اپنے بااعتماد ذرائع سے معلوم ہوا  ہے اور ان کے پاس اس کےواضح  ثبوت موجود ہیں کہ بڑےعہدوں پر تعینات بعض یمنی فوج کے  حکام نے القاعدہ کی ذیلی تنظیم ، انصارلشریعہ کے مجاہدین کو اہم خفیہ معلمومات فراہم  کی تھیں کہ اس فوجی اڈے پر کہاں اور کس وقت حملہ کرنا ہے ۔

دیکھیے یو ٹیوب لنک
Yemeni journalist Hakim al Masmari says Yemeni officials tipped fighters off

یمن میں مجاہدین کی قوت
یمن میں مجاہدین کی قوت اور اعلیٰ عسکری صلاحیت کا اندازہ اس بات سے لگایا جا سکتا ہے کہ ،مجاہدین نے منصور ہادی کی تقریب حلف برداری کے موقعہ پر بھی صدارتی محل کے باہر حملہ کیا تھا ۔

علی  عبداللہ صالح کے تینتیس (۳۳) سالہ اقتدار کے خاتمہ کےبعد  ۲۳ فروری ۲۰۱۲ کو  عبد ربہ منصور ہادی نےصدر کے عہدہ کا حلف اٹھایا اور  باقاعدہ طور پر زمام کار سنبھالی ۔ اس روز صدارتی محل کے باہر  اس نے القاعدہ کے خلاف جنگ جاری رکھنے عندیہ دیتے ہوئے یمنی عوام سے اپیل کی کہ آپ لوگ  القاعدہ کے خلاف جنگ میں یمن کی حکومت کا ساتھ دیں۔ عین اس وقت جب صدارتی محل کے باہر  یہ تقریب جاری تھی ہمارے ایک استشہادی بھائی نے سخت حفاظتی انتظامات کے باوجود اللہ کی نصرت سے ایک کامیاب  شہیدی کارروائی کر کے چھبیس (۲۶) مرتد فوجیوں کے لیے تابوت کا آرڈر بک کروا دیا  ۔

وللہ الحمد المنۃ !!!

کاش کہ پاکستانی مرتد افواج اس سے کچھ سبق سیکھنے کی کوشش کریں       ۔۔۔

Thursday, March 1, 2012

حور کدھر چلی گئی


 یحییٰ سنیور شہید

میں یہاں ہوں ٹینکوں ‘ گولوں اور توپوں کے نرغے میں۔خوشی اور ضمیر کی طمانیت کے انوکھے احساس سے سرشار ! سردی کی شدت اور بھوک کی تنگی کے باوجود اس کیفیت کو محسوس کر رہا ہوں کہ اللہ تعالیٰ کے سب سے محبوب کام یعنی جہاد فی سبیل اللہ میں شریک ہوں۔ مجھے یقین ہے کہ اللہ تعالیٰ محنت کرنے والوں کا اجر ضائع نہیں فرماتے

وَلَا تَحْسَبَنَّ الَّذِينَ قُتِلُوا فِي سَبِيلِ اللَّـهِ أَمْوَاتًا ۚ بَلْ أَحْيَاءٌ عِندَ رَبِّهِمْ يُرْزَقُونَ ﴿١٦٩﴾  اٰل عمران
اور جو لوگ اللہ تعالیٰ کی راہ میں مارے گئے ہیں انہیں مردے نہ سمجھو بلکہ وہ زندہ ہیں ‘اپنے پروردگار کے مقرب ہیں‘ انہیں رزق بھی ملتا ہے

قرآنِ مجید کی یہ آیت وہ  الفاظ ہیں جوآپ کی جیب سے اس وقت بر آمد ہوئے جب زندگی آپ کودوسرے جہاں لے جا رہی تھی۔ آپ کے ایک ہم سفر محمد امین نے‘ جن کے سینے پر سر رکھے ہوئے آپ نے اس دنیا سے کوچ کیا‘ بتایا: یحییٰ نے سرزمینِ جہاد پر بسر کی گئی آخری رات میں یہ آیت اپنے ہاتھ سے لکھی تھی ۔ آپ کے روئیں روئیں سے شہادت کی طرف پیش قدمی کرنے کے آثار پھوٹتے دکھائی دیتے تھے۔گردن تک وہن کی بیماری میں دھنسی امت کو جگانے کے لیے‘آپ نے اپنا خون پسینہ بہا دینے اور جان قربان کر ڈالنے کی قسم کھا رکھی تھی۔ وہ امت جو انسانیت کی رہنمائی کے لیے میدانِ عمل میں لائی گئی تھی مگر آج اس نے ہر جبار کے سامنے ذلت وعاجزی سے سر جھکانا اپنا وطیرہ بنا رکھا ہے۔ہمیں یاد ہے جب آپ نے قسم کھا کر کہا کہ

میں شہید ہوجاؤں گا‘ دوستوں نے آپ سے کہا: ‘‘ اپنے تئیں پاک باز مت بنئے ۔ تو آپ کہنے لگے معاذ اللہ میں اپنی صفائی پیش نہیں کر رہا ‘ میں تو بس اپنے دل کی آواز آپ کو سنا رہا ہوں۔

وہ حور کدھر چلی گئی ؟

عرفہ کے دن جب روسی فوجیں آگے پیچھے اور دائیں بائیں سے‘غازیوں پر یلغار کرنے کے لیے آگے بڑھ رہی تھیں‘ کلیجے منہ کو آرہے تھے ‘ایسے میں بھی آپ اٹھے اور اپنے ساتھیوں کے ساتھ سحری کی تیاری کر نے لگے‘ میدانِ کارزار میں عرفہ کے دن کا روزہ رکھنے کے لیے۔ وہ روزہ‘ جس کے بارے میں نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کی بشارت ہے کہ وہ دو سال (ایک گزشتہ اور ایک آئندہ)کے گناہوں کا کفارہ ہوتا ہے۔ پھر عرفہ کے اُس روزے کے کیا کہنے جو بارش کی مانند برستے گولوں کی بوچھاڑ میں رکھا گیا ہو ‘بے شک اس کا اجر عظیم ہے  !صحیح حدیث میں ہے‘ نبی صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا :

﴿﴿مَنْ صَامَ یَوْمًا فِي سَبِیْلِ اﷲِ بَاعَدَ اﷲُ بَیْنَہُ وَ بَیْنَ النَّارِ بِذَلِکَ الْیَوْمِ سَبْعِیْنَ خَرِیْفًا﴾﴾ ﴿سنن النسائي، باب ثواب من صام یوماً في سبیل اﷲ﴾

جو کوئی اللہ تعالیٰ کے راستے میں نکل کرایک دن کا روزہ رکھے تو اللہ تعالیٰ اس ایک دن کے بدلے ‘جہنم اور اس کے درمیان ستر ستر سال کا فاصلہ کر دیں گے

 سحری سے جلدی جلدی فارغ ہو جانے پر بھائیوں نے حیرت کا اظہار کیا تو آپ کہنے لگے :  میں نہانے جا رہا ہوں۔ ساتھ میں آپ نے وضاحت کی اللہ عزّوجل کی قسم ! مجھے غسل کی کوئی شرعی ضرورت پیش نہیں آئی۔ تاہم میں اس حورکے استقبال کے لیے نہانا ضروری سمجھتا ہوں جو آج مجھے خواب میں ملنے آئی تھی۔ میں نے کبھی خواب میں کسی عورت کو نہیں دیکھا۔ آج جو حُسن خواب میں مجھے نظر آیا اسے دیکھ کر مجھے اسی وقت یقین ہو گیا تھا کہ یہ زمین کی کوئی مخلوق نہیں‘بلکہ ( جنت کی )حور ہے !  پھر دن بھر معرکہ گرم رہا ‘یہاں تک کہ ختم بھی ہو گیا لیکن شہادت ندارد! ساتھی مزاحاً کہنے لگے:  وہ حور کدھر چلی گئی ؟ مگر آپ اس کے آنے پرمُصر رہے۔ مجھے ساتھیوں نے بتایا کہ یحییٰ جاجی کی چوٹی پر تین عرب بھائیوں  کی قبروں پر کھڑے رہے ‘ پھرانھیں مخاطب کر کے کہنے لگے: بس تھوڑی دیر میں‘ میں بھی تمہاری طرف چلا آؤں گا۔


اس جیسی پاکیزہ اور بھینی خوشبو میں نے کبھی نہیں سونگھی

 ۷ محرم کو وعدہ وفا ہونے کا دن آ پہنچا۔ شہادت کا وہ تمغہ‘ جس کے حصول کی تڑپ نے آپ کواپنا اسیر بنا رکھا تھا‘آپ کا منتظر تھا۔ کفار کے ایک دستے نے جاجی کے پھاٹک پر اپنی بندوقوں کے دھانے کھول دیے اورآپ اپنا سود ا ئے نقدجیت گئے۔

یحییٰ! آپ کا پاکیزہ لہو زمین کو سیراب کر گیا۔ جو کوئی آپ کے جسم کو چھوتا‘ آپ کے خون کا کوئی قطرہ اس کے کپڑوں پر لگتا تو خوشبو اُس کو بھی مہکا دیتی۔ یہاں تک کہ جنازے میں شریک ہر فرد کہہ اٹھا :’’اللہ سبحانہ ‘ وتعالیٰ کی قسم ! ہم نے اپنی زندگی میں اس سے زیادہ اچھی خوشبو نہیں سونگھی‘‘۔ ابو الحسن مقدسی نے مجھے بتایا :’’ میں نے اور ابو معاذ نے پانچ سو میٹر کی مسافت سے شہید کی خوشبو محسوس کی جب کہ انھیں ان کی آخری آرام گاہ میں لے جایا جا رہا تھا۔ ہمیں امید ہے ان کی قبر جنت کے باغوں میں سے ایک باغیچہ ہوگی‘‘۔ ڈاکٹر احمد کہنے لگے :’’ مجھے بہت سے شہداء کو دیکھنے کا اتفاق ہوا ہے۔ مگر مجھے اس جیسی پاکیزہ اور بھینی خوشبو کبھی سونگھنے کو نہیں ملی !‘‘ڈاکٹر ابو محمد نے بتایا :’’ جس ہسپتال میں یحییٰ کو داخل کیا گیا تھا‘ مجھے ان کی شہادت کے تین روز بعد وہاں جانے کا اتفاق ہوا۔ مجھے محسوس ہوا کہ ان کا کمرہ اب تک خوشبو سے رچا ہوا تھا ‘‘۔ا بو حمزہ کہنے لگے :’’ جنازے سے واپسی پر میری اہلیہ نے مجھے دیکھتے ہی حیرت کا اظہار کیا اور کہنے لگی :’’آپ نے کون سا عطر لگا رکھا ہے؟‘‘

 وردگ کی وادی سے آپ کو بہت محبت تھی ۔ اس کے چپے چپے کو آپ چھان چکے تھے۔ وہاں موجود مجاہدین کے تمام مراکز آپ کے علم میں تھے اورآپ ان تک بڑے ذوق و شوق سے ضروریات پہنچانے کا کام انجام دیتے تھے۔ اسی لیے آپ نے اپنے نام کے ساتھ عبدالرحمن عبد الکبیر ’وردکی‘ تخلص لگا رکھا تھا۔درحقیقت آپ نے اپنے لیے عظمتوں کی راہ چن لی اور ایک لمبی مسافت عبور کر کے اپنے ربّ کے پاس پہنچ گئے ‘ سچی عزت کی جگہ !

یحییٰ !آپ ہمارے درمیان زیادہ عرصہ نہیں رہے۔ مگر اپنی بیس سالہ عمر میں عزت و سر بلندی کے بڑے بڑے معرکے سر کر گئے۔ ہم اپنے کریم ربّ سے دعا گو ہیں کہ آپ ملاء اعلیٰ میں ‘اپنے ربّ کے عرش کے پاس حقیقی خوشی اور سرور سے فیض یاب ہو جائیں اوراے کاش کہ اللہ تعالیٰ ہمیں بھی سعادت کی زندگی اور شہادت کی موت نصیب فرمائیں‘انبیاء کی معیت میں ہمیں اکٹھا فرما دیں اور بے شک اللہ تعالیٰ کی رحمت سے کچھ بھی بعید نہیں۔ اللہ کریم آپ کے والدین اور بہن بھائیوں کو صبرِ جمیل اور اجر ِ عظیم سے نوازیں‘اور قیامت کے دن شہید کو ان کی شفاعت کرنے والا بنادیں‘آمین۔ اختتام میں ہم اپنے مالک کی یہ آیات پھر دہراتے ہیں :

انبیاء  کے رستے کے راہی یہ نہیں دیکھتے کہ وہ پھولوں پر چل رہے ہیں یا کانٹوں پر!

شہید یحییٰ سنیور کا آخری خط کچھ اس طرح سے تھا: مسلمان مردِ مجاہد اپنا ہدف اچھی طرح پہچانتا ہے۔ لہٰذا وہ ہمیشہ اپنی منزل کی طرف‘ پوری یک سُوئی سے گامزن رہتا ہے‘وہ کشتیاں جلا کر آگے کی طرف پیش قدمی کرتا  ہے‘ تنگیاں اور سختیاں اس کے قدم نہیں ڈگمگا تیں ۔ و ہ ان آزمائشوں میں بھی راحت و خوشی  اور کیف و سرور پاتا ہے۔ کیونکہ اس کا ہر سانس فی سبیل اللہ ہو تا ہے۔بقول ایک شاعر ؛ انبیاء کے رستے کے راہی یہ نہیں دیکھتے کہ وہ پھولوں پر چل رہے ہیں یا کانٹوں پر ۔
ہمارے اس قول کی سچائی کے لیے شہید کے آخری خط کا یہ اقتباس کا فی ہے جو اس نے اپنے اہل خانہ کے نام تحریر کیا۔ ذرا اپنے گوشِ ہوش سے سُنیے‘ شہید کیا کہہ رہا ہے :
میں یہاں ہوں ٹینکوں ‘ گولوں اور توپوں کے نر غے میں۔خوشی اور طمانیت کے انوکھے احساس سے سرشار ہوں۔ سردی کی شدت اور بھوک کی تنگی کے باوجود کیفیت یہ ہے کہ اپنے کو اللہ تعالیٰ کے سب سے محبوب کام یعنی جہاد فی سبیل اللہ میں شریک محسوس کر رہا ہوں۔ مجھے یقین ہے کہ اللہ تعالیٰ محنت کرنے والوں کا اجر ضائع نہیں فرماتے۔در حقیقت جہاد ہی وہ راستہ ہے جو رحمن کو سب سے محبوب ہے اور جو امت کو اس کی شان و شوکت اور سر بلندی واپس دلا سکتا ہے۔

ماخوذ  :   جنہیں جنتوں کی تلاش تھی